Suno Baba! 

                                                                     !سنو بابا 

فرصت کے لمحے جب آئیں تم کو میسر۔۔

!ملنا پھر اپنی لاڈلی کو خوابوں میں تم اکثر

 ،کرنا پھر باتیں، ہر پل کی ہر لمحے کی

!نہ چھیڑیں گے کوئ بات کسی دکھ کی کسی سانحے کی

دہرائیں گے ہر اس یاد کو ساتھ میں ہم

!جب ساتھ تھے اور ساتھ تھے بس ساتھ تھے ہم

وہ دن بیت گئے بابا ،جب شام ڈھلے

تم لوٹ کر آتے تھے بہت تھکےتھکے۔۔

میں تو دستک کی آواز سے پہچان جاتی تھی۔۔

قدموں کی چاپ کے قربان جاتی تھی۔۔

اب نہ دستک ہوتی ہے نہ کوئ آہٹ آتی ہے۔۔

لوٹ آتی ہوں ہر شام یہ سوچ کے تھک کر۔۔

کے ملنے کو آوگے اب تم خوابوں میں اکثر۔۔

                                                    !!!سنو بابا 

 آنکھیں ہیں کے جانے، “ترسی” ہوئ ہیں یا “تر “سی ہوئ ہیں

بہتی ہیں ایسے کے کبھی نہر سی ہوئ ہیں تو کبھی بہر سی ہوئ ہیں

تکلیف کی شدت ہے کے کم ہی نہیں ہوتی۔۔

گزرتی ہوئ گھڑیاں تو قہر سی ہوئ ہیں۔۔

دن بیتے سال بیتے ،  یا بیتے عمر۔۔

جوانی گزرے، بھڑاپا آئے یا وقت قبر۔۔

بھولنا نہ کبھی تم یہ پیما نے پدر۔۔

ملنا پھر اپنی لاڈلی کو خوابوں میں تم اکثر۔۔

19th April 2016 marks 4 years of our separation. The bond of love we share however, continues to strengthens with time. Hope you lay asleep with angels around. Sending my love and prayers your way with a special prayer that may no daughter goes through what your daughters do. Ameen. 

Dated : 19th April’2017. 

Advertisements

Author: diffusedshadings

Writer by choice, Medical Student by Aim :")

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s